جانیئے پاکستان کی وہ نامور شخصیت کونسی ہے، جسکو خانہ کعبہ کی تعمیرِنو میں بطور مزدور کام کرنے کا اعزاز حاصل ہوا؟

جانیئے پاکستان کی وہ نامور شخصیت کونسی ہے، جسکو خانہ کعبہ کی تعمیرِنو میں بطور مزدور کام کرنے کا اعزاز حاصل ہوا؟

بی کیونیوز! لاہور نامور مضمون نگار طاہر سرور میر اپنے ایک بڑے آرٹیکل میں لکھتے ہیں اور صوفی تبسم کے پوتے ڈاکٹر جاوید صوفی بتاتے ہیں. سنہ 1978 میں اور میرا دوست نیلام گھر میں ہی مہمان بنے۔ اور ہم دونوں دوست طارق عزیز کے روبرو تھے اور گاڑی کے لیے سوالات کے جواب بھی دے رہے تھے۔ ہمیں ٹارگٹ دیا گیا تھا اور ہم نے 22 سوالات کا جواب دے کر گاڑی جیتنا تھی۔ اور میں اور میرے دوست نے بیس سوالات کے جواب دیے، ہم سے دوغلطیاں ہوئیں جس کے بعد ہم گاڑی کی بجائے ٹیلی ویژن جیت کر گھر لوٹے تھے۔ ڈاکٹر ٹونی نے بتایا طارق عزیز بتایا

کرتے تھے اور وہ خوش نصیب ہیں کہ انھیں یہ سعادت نصیب ہوئی اور انھوں نے ہی خانہ کعبہ کی تعمیر نو کے متبرک کام میں ایک مزدور کی حیثیت سے کچھ دیر کام کیا اور آغا قیصر کے مطابق طارق عزیز بتاتے تھے انھیں خانہ کعبہ میں ایک اینٹ لگانے کی سعادت نصیب ہوئی ہے۔ اور ’انھیں یہ سعادت خانہ کعبہ کی تعمیر نو پر تعینات ایک پاکستانی کنٹریکٹر کے تعاون سے ہی نصیب ہوئی تھی جو اُن کا مداح ہی تھا۔ دیکھتی آنکھوں سنتے کانوں کو طارق عزیز کا سلام پہنچے اور یہ وہ جملہ ہے جو ربع صدی سے زائد وقت سے ہی ہماری سماعتوں میں گونج رہا ہے۔ اور طارق عزیز جب اپنے ٹی وی شو کے آغاز میں ہی بھاگتے ہوئے لوگوں کے سامنے آتے اور یہ جملہ ادا کرتے توسب ہاتھ دیوانہ وار تالیاں بجا کر اُن کا استقبال بھی کیا کرتے۔ سینیئر اداکار اور طارق عزیز کے بہت ہی قریبی دوست محمد قوی خان بتاتے ہیں اور یہ ابتدائیہ طارق نے یوں اختراع کیا تھا کہ ایک دن اسے ایک ایسا پرستار ملا جو آنکھوں سے دیکھ نہیں سکتا تھا۔ اُس نے کہا کہ طارق عزیز صاحب میں تو آپ کا ہر پروگرام سنتا ہوں، اور بلکہ کانوں سے سنتے ہوئے آپ کو دیکھتا ہوں، لیکن آپ مجھے کبھی مخاطب ہی نہیں کرتے۔ اس نابینا پرستار کی فرمائش پر خدا نے طارق کو یہ خیال بخشا اور اس کے دماغ میں یہ اہم جملہ اُترا کہ دیکھتی آنکھوں سُنتے کانوں کو طارق کا سلام پہنچے۔ اور پھر ہم سب نے دیکھا طارق عزیز کا سلام ساری دنیا تک ہی پہنچا ہے.

Leave a Comment