حضرت ابو سعید نے ایک با پوچھا کہ یارسول اللہ ﷺ آپ ہمیں بتائیے یہ بیماریاں جو ہمیں آتی ہیں ان کی وجہ سے ہمیں کیا اجر ملتا ہے؟

حضرت ابو سعید ؓ نے ایک با رپوچھا کہ یارسول اللہ ﷺ آپ ہمیں بتائیے یہ بیماریاں جو ہمیں آتی ہیں ان کی وجہ سے ہمیں کیا اجر ملتا ہے؟

بی کیو نیوز! حضرت ابو سعید خدری رضی اللہ تعالیٰ عنہٗ سے روایت ہے کہ ایک مسلمان نے عرض کیا کہ ” یارسول اللہ صلَّی اللہ تعالٰی علیہ وآلہ وسلَّم! آپ ہمیں بتلائیے یہ بیماریاں جو ہمیں آتی ہیں ان کی وجہ سے ہمیں کیا اجر ملتا ہے؟ آپ ﷺ نے ارشاد فرمایا کہ ” گ-ن-ا-ہ-وں کاک-ف-ار-ہ ہیں. ” حضرت ابی بن کعب رضی اللہ تعالیٰ عنہٗ نے عرض کیا (جو اسی مجلس میں موجود تھے) کہ ” اے اللہ کے رسول صلَّی اللہ تعالٰی علیہ وآلہ وسلَّم! خواہ وہ بیماری تھوڑی سی ہو؟ ” آپ صلَّی اللہ تعالٰی علیہ وآلہ وسلَّم نے ارشاد فرمایا ” خواہ کانٹا ہی

کیوں نہ چبھا ہو یا اس سے بھی کوئی چھوٹی چیز” (مسند احمد) حضرت اُم العلاء رضی اللہ تعالیٰ عنہا سے روایت ہے،آپ فرماتی ہیں کہ آپ صلَّی اللہ تعالٰی علیہ وآلہ وسلَّم میری عیادت کیلئے تشریف لائے، جبکہ میں بیمار تھی۔ آپ صلَّی اللہ تعالٰی علیہ وآلہ وسلَّم نے ارشاد فرمایا ” اے ام العلاء! تمہیں خوش خبری ہو کہ مسلمان کی بیماری اس کے گ-ن-اہ-وں کو ایسے ختم کر دیتی ہے جیسے آ-گ لوہے اور چاندی کے کھوٹ کو” (ابوداؤد) حضرت جابر بن عبداللہ رضی اللہ تعالیٰ عنہ سے روایت ہے کہ آپ صلَّی اللہ تعالٰی علیہ وآلہ وسلَّم کو فرماتے ہوئے سنا کہ ” مومن مرد ہو یا مومن عورت، مسلمان مرد ہو یا مسلمان عورت، بیمار ہو تو اللہ تعالیٰ اس کے گ-ن-اہوں کو اس بیماری کی وجہ سے جھاڑ دیتے ہیں۔ (ایک دوسری روایت میں آتا ہے) اللہ تعالیٰ اس کی خطاؤں کو جھاڑ دیتے ہیں.” (مسند احمد) حضرت عائشہ رضی اللہ تعالیٰ عنہا سے روایت ہے کہ حضور نبی اکرم حضرت محمّد مصطفٰی صلَّی اللہ تعالٰی علیہ وآلہ وسلَّم نے ارشاد فرمایا کہ” جب بندہ مومن بیمار ہوتا ہے تو اللہ تعالیٰ جل شانہٗ اس کو اس کے گ-ن-اہ-وں سے ایسا پاک کردیتے ہیں، جیسے بھٹی لوہے کے میل کچیل کو صاف کر دیتی ہے.” (ابن حیان) حضرت انس رضی اللہ تعالیٰ عنہٗ سے روایت ہے کہ آپ صلَّی اللہ تعالٰی علیہ وآلہ وسلَّم نے ارشاد فرمایا کہ ” جب بندہ تین دن بیمار رہے تو گ-ن-اہوں سے ایسے صاف ہو جاتا ہے جیسے آج ہی ماں کے پیٹ سے پیدا ہوا ہو.

Leave a Comment