بغداد ﭘﺮ ﺗﺎﺗﺎﺭﯼ فوج کے ﻓﺘﺢ ﮐﮯ ﺑﻌﺪ ایک مسلمان عالم نے ہلاکو خان کی بیٹی کو کیا خوبصورت جواب دیے

بغداد ﭘﺮ ﺗﺎﺗﺎﺭﯼ فوج کے ﻓﺘﺢ ﮐﮯ ﺑﻌﺪ ایک مسلمان عالم نے ہلاکو خان کی بیٹی کو کیا خوبصورت جواب دیے

بغداد ﭘﺮﺗﺎﺗﺎﺭﯼ فوج کے ﻓﺘﺢ ﮐﮯ ﺑﻌﺪ ﮨﻼﮐﻮ ﺧﺎﻥ ﮐﯽ ﺑﯿﭩﯽ ﺑﻐﺪﺍﺩ ﻣﯿﮟ ﮔﺸﺖ ﮐﺮﺭﮨﯽ ﺗﮭﯽ ﮐﮧ ﺍﯾﮏ ﮨﺠﻮﻡ ﭘﺮﺍﺱ ﮐﯽ ﻧﻈﺮ ﭘﮍﯼ۔ ﭘﻮﭼﮭﺎ گیا کہ ﻟﻮﮒ ﯾﮩﺎﮞ ﮐﯿﻮﮞ ﺍﮐﭩﮭﮯ ﮨﯿﮟ؟ ﺟﻮﺍﺏ ﺁﯾﺎ: ﺍﯾﮏ ﻋﺎﻟﻢ ﮐﮯ ﭘﺎﺱ ﮐﮭﮍﮮ ﮨﯿﮟ۔  ﮨﻼﮐﻮ خان کی بیٹی ﻧﮯ ﻋﺎﻟﻢ ﮐﻮ ﺍﭘﻨﮯ ﺳﺎﻣﻨﮯ ﭘﯿﺶ ﮨﻮﻧﮯ ﮐﺎ ﺣﮑﻢ ﺩﯾﺎ۔ مسلمانﻋﺎﻟﻢ ﮐﻮ ﺗﺎﺗﺎﺭﯼ ﺷﮩﺰﺍﺩﯼ ﮐﮯ ﺳﺎﻣﻨﮯپیش ﮐﯿﺎ ﮔﯿﺎ۔ ﺷﮩﺰﺍﺩﯼ نے ﻣﺴﻠﻤﺎﻥ ﻋﺎﻟﻢ ﺳﮯ ﺳﻮﺍﻝ ﮐﺮﻧﮯ ﻟﮕﯽ: ﮐﯿﺎ ﺗﻢ ﻟﻮﮒ ﺍﻟﻠﮧ ﭘﺮ ﺍﯾﻤﺎﻥ ﻧﮩﯿﮟ ﺭﮐﮭﺘﮯ؟ ﻋﺎﻟﻢ نے کہا: ﯾﻘﯿﻨﺎً ﮨﻢ ﺍﯾﻤﺎﻥ ﺭﮐﮭﺘﮯ ﮨﯿﮟ۔

ﺷﮩﺰﺍﺩﯼ نے کہا: ﮐﯿﺎ ﺗﻤﮩﺎﺭﺍ ﺍﯾﻤﺎﻥ ﻧﮩﯿﮟ ﮐﮧ ﺍﻟﻠﮧ ﺟﺴﮯ ﭼﺎﮨﮯ ﻏﺎﻟﺐ ﮐﺮﺗﺎ ﮨﮯ؟ ﻋﺎﻟﻢ نے کہا: ﯾﻘﯿﻨﺎً ﮨﻤﺎﺭﺍ ﺍﺱ ﭘﺮ ﺍﯾﻤﺎﻥ ﮨﮯ۔ ﺷﮩﺰﺍﺩﯼ نے کہا: ﺗﻮ ﮐﯿﺎ ﺍﻟﻠﮧ تعالٰی ﻧﮯ ﺁﭺ ﮨﻤﯿﮟ ﺗﻢ ﻟﻮﮔﻮﮞ ﭘﺮ ﻏﺎﻟﺐ ﻧﮩﯿﮟ ﮐﺮﺩﯾﺎ؟ ﻋﺎﻟﻢ نے کہا: ﯾﻘﯿﻨﺎً ﮐﺮﺩﯾﺎ ﮨﮯ۔ ﺷﮩﺰﺍﺩﯼ نے کہا: ﺗﻮ ﮐﯿﺎ ﯾﮧ ﺍﺱ ﺑﺎﺕ ﮐﯽ ﺩﻟﯿﻞ ﻧﮩﯿﮟ ﮐﮧ ﺧﺪﺍ ﮨﻤﯿﮟ ﺗﻢ ﺳﮯ ﺯﯾﺎﺩﮦ ﭼﺎﮨﺘﺎ ﮨﮯ؟ ﻋﺎﻟﻢ: ﻧﮩﯿﮟ ﺷﮩﺰﺍﺩﯼ: ﮐﯿﺴﮯ؟ ﻋﺎﻟﻢ: ﺗﻢ ﻧﮯ ﮐﺒﮭﯽ ﭼﺮﻭﺍﮨﮯ ﮐﻮ ﺩﯾﮑﮭﺎ ﮨﮯ؟ ﺷﮩﺰﺍﺩﯼ: ﮨﺎﮞ ﺩﯾﮑﮭﺎ ﮨﮯ۔ ﻋﺎﻟﻢ: ﮐﯿﺎ ﺍﺱ ﮐﮯ ﺭﯾﻮﮌ ﮐﮯ ﭘﯿﭽﮭﮯ ﭼﺮﻭﺍﮨﮯ ﻧﮯ ﺍﭘﻨﮯ ﮐﭽھ ﮐﺘﮯ ﺑﮭﯽ ﺭﮐہ ﭼﮭﻮﮌﮮ ﮨﻮﺗﮯ ﮨﯿﮟ؟ ﺷﮩﺰﺍﺩﯼ: ﮨﺎﮞ ﺭﮐﮭﮯ ﮨﻮﺗﮯ ﮨﯿﮟ۔ ﻋﺎﻟﻢ: ﺍﭼﮭﺎ ﺗﻮ ﺍﮔﺮ ﮐﭽھ ﺑﮭﯿﮍﯾﮟ ﭼﺮﻭﺍﮨﮯ ﮐﻮ ﭼﮭﻮﮌ ﮐﻮ ﮐﺴﯽ ﻃﺮﻑ ﮐﻮ ﻧﮑﻞ ﮐﮭﮍﯼ ﮨﻮﮞ۔ ﺍﻭﺭ ﭼﺮﻭﺍﮨﮯ ﮐﯽ ﺳﻦ ﮐﺮ ﺩﯾﻨﮯ ﮐﻮ ﺗﯿﺎﺭ ﮨﯽ ﻧﮧ ﮨﻮﮞ، ﺗﻮ ﭼﺮﻭﺍﮨﺎ ﮐﯿﺎ ﮐﺮﺗﺎ ﮨﮯ؟ ﺷﮩﺰﺍﺩﯼ: ﻭﮦ ﺍﻥ ﮐﮯ ﭘﯿﭽﮭﮯ ﺍﭘﻨﮯ ﮐﺘﮯ ﺩﻭﮌﺍﺗﺎ ﮨﮯ ﺗﺎﮐﮧ ﻭﮦ ﺍﻥ ﮐﻮ ﻭﺍﭘﺲ ﺍﺱ ﮐﯽ ﮐﻤﺎﻥ ﻣﯿﮟ ﻟﮯ ﺁﺋﯿﮟ۔ ﻋﺎﻟﻢ: ﻭﮦ ﮐﺘﮯ ﮐﺐ ﺗﮏ ﺍﻥ ﺑﮭﯿﮍﻭﮞ ﮐﮯ ﭘﯿﭽﮭﮯ ﭘﮍﮮ ﺭﮨﺘﮯ ﮨﯿﮟ؟ ﺷﮩﺰﺍﺩﯼ: ﺟﺐ ﺗﮏ ﻭﮦ ﻓﺮﺍﺭ ﺭﮨﯿﮟ ﺍﻭﺭ ﭼﺮﻭﺍﮨﮯ ﮐﮯ ﺍﻗﺘﺪﺍﺭ ﻣﯿﮟ ﻭﺍﭘﺲ ﻧﮧ ﺁﺟﺎﺋﯿﮟ۔ ﻋﺎﻟﻢ: ﺗﻮ ﺁﭖ ﺗﺎﺗﺎﺭﯼ ﻟﻮﮒ ﺯﻣﯿﻦ ﻣﯿﮟ ﮨﻢ ﻣﺴﻠﻤﺎﻧﻮﮞ ﮐﮯ ﺣﻖ ﻣﯿﮟ ﺧﺪﺍ ﮐﮯ ﭼﮭﻮﮌﮮ ﮨﻮﺋﮯ ﮐﺘﮯ ﮨﯿﮟ۔ ﺟﺐ ﺗﮏ ﮨﻢ ﺧﺪﺍ ﮐﮯ ﺩﺭ ﺳﮯ ﺑﮭﺎﮔﮯ ﺭﮨﯿﮟ ﮔﮯ۔ ﺍﻭﺭ ﺍﺱ ﮐﯽ ﺍﻃﺎﻋﺖ ﺍﻭﺭ ﺍﺱ ﮐﮯ ﻣﻨﮩﺞ ﭘﺮ ﻧﮩﯿﮟ ﺁﺟﺎﺋﯿﮟ ﮔﮯ۔ ﺗﺐ ﺗﮏ ﺧﺪﺍ ﺗﻤﮩﯿﮟ ﮨﻤﺎﺭﮮ ﭘﯿﭽﮭﮯ ﺩﻭﮌﺍﺋﮯ ﺭﮐﮭﮯ ﮔﺎ۔ ﺗﺐ ﺗﮏ ﮨﻤﺎﺭﺍ ﺍﻣﻦ ﭼﯿﻦ ﺗﻢ ﮨﻢ ﭘﺮ ﺣﺮﺍﻡ ﮐﯿﮯ ﺭﮐﮭﻮﮔﮯ۔ ﮨﺎﮞ ﺟﺐ ﮨﻢ ﺧﺪﺍ ﮐﮯ ﺩﺭ ﭘﺮ ﻭﺍﭘﺲ ﺁﺟﺎﺋﯿﮟ ﮔﮯ ﺍُﺱ ﺩﻥ ﺗﻤﮩﺎﺭﺍ ﮐﺎﻡ ﺧﺘﻢ ﮨﻮﺟﺎﺋﮯ ﮔﺎ۔ ﻣﺴﻠﻤﺎﻥ ﻋﺎﻟﻢ ﮐﮯ ﺍﺱ ﺟﻮﺍﺏ ﻣﯿﮟ ﺁﺝ ﮨﻤﺎﺭﮮ ﻏﻮﺭﻭﻓﮑﺮ ﮐﮯﻟﯿﮯ ﺑﮩﺖ ﮐﭽﮫ ﭘﻮﺷﯿﺪﮦ ﮨﮯ

اپنی رائے کا اظہار کریں