9ہجری میں رسول اللہﷺ تبوک جاتے ہوئے جب وادیٔ ثمود سے گزرے

9ہجری میں رسول اللہﷺ تبوک جاتے ہوئے جب وادیٔ ثمود سے گزرے

بی کیونیوز! مسند احمد میں حضرت ابنِ عُمرؓ سے مروی ہے کہ9ہجری میں رسول اللہﷺ تبوک جاتے ہوئے جب وادیٔ ثمود سے گزرے، تو آپﷺ نے اس ویران اور اجڑی جگہ کو دیکھ کر صحابہؓ سے فرمایا ’’یہاں سے جلدی سے گزر چلو اور اگر پانی کی ضرورت ہو، تو صرف اس کنویں کا پانی استعمال کرو، جس سے حضرت صالح ؑ کی اونٹنی پانی پیا کرتی تھی۔‘‘ بعض صحابہؓ نے دوسرے کنوئوں سے پانی لے کر آٹا گوندھ لیا تھا، آپﷺ نے اسے پھینکوا دیا۔ اس عرصے میں آپﷺ مسلسل

توبہ استغفار کرتے رہے۔ پھر نبی کریمﷺ نے اپنے اصحابؓ کو منع فرمایا کہ’’ قومِ ثمود جو عذاب سے ہلاک ہوئی، اُن کے گھروں اور بستیوں میں نہ جائیں‘‘ اور فرمایا کہ ’’مجھے خوف ہے کہ کہیں تم کو بھی وہی (عذاب) نہ پہنچ جائے، جو اُن کو پہنچا تھا، لہٰذا اُن کے پاس نہ جائو۔‘‘ حضرت صالح ؑ کی عُمر اور مزار ابنِ کثیرؒ کے مطابق آپؑ کا انتقال دو سو اسّی برس کی عُمر میں ہوا۔ مفسّرین میں اس پر مختلف آراء ہیں کہ قوم پر عذاب کے بعد حضرت صالح ؑنے کہاں قیام فرمایا۔ اکثر نے تحریر کیا کہ ثمود کی ہلاکت کے بعد آپؑ اہلِ ایمان کے ساتھ شام تشریف لے گئے اور پھر فلسطین میں کچھ عرصہ قیام کے بعد مکّہ مکرّمہ آ گئے اور وہیں انتقال ہوا۔ ایک رائے یہ بھی ہے کہ حضرت صالح،ؑ قوم پر عذاب کے بعد عمان (صلالہ) سے دو سو کلومیٹر دُور، ناسک کے مقام پر آباد ہو گئے، جہاں اُن کا انتقال ہوا۔ ناسک میں اُن سے منسوب ایک مزار بھی ہے، جہاں زائرین کثیر تعداد میں فاتحہ کے لیے آتے ہیں. اکثر نے تحریر کیا کہ ثمود کی ہلاکت کے بعد آپؑ اہلِ ایمان کے ساتھ شام تشریف لے گئے اور پھر فلسطین میں کچھ عرصہ قیام کے بعد مکّہ مکرّمہ آ گئے اور وہیں انتقال ہوا۔ ایک رائے یہ بھی ہے کہ حضرت صالح،ؑ قوم پر عذاب کے بعد عمان (صلالہ) سے دو سو کلومیٹر دُور، ناسک کے مقام پر آباد ہو گئے، جہاں اُن کا انتقال ہوا۔ ناسک میں اُن سے منسوب ایک مزار بھی ہے، جہاں زائرین کثیر تعداد میں فاتحہ کے لیے آتے ہیں.