حضرت صالح علیہ السّلام کی مسلسل وعظ و نصیحت کے باوجود قوم نے معجزے کی فرمائش کی

حضرت صالح علیہ السّلام کی مسلسل وعظ و نصیحت کے باوجود قوم نے معجزے کی فرمائش کی

بی کیونیوز! حضرت صالح علیہ السّلام کی مسلسل وعظ و نصیحت اور اس کے نتیجے میں غریب لوگوں کا ایمان لانا قومِ ثمود کے سرداروں کے لیے تشویش کا باعث تھا۔ دراصل غرور وتکبّر کی دلدل میں دھنسے یہ لوگ اس بات کا تصوّر بھی نہیں کر سکتے تھے کہ کوئی عام آدمی اس طرح محفلوں اور چوک، چوراہوں پر کھڑا ہو کر اُن کے آباؤاجداد کے خدائوں کی نفی کرے اور صرف ایک اَن دیکھے ربّ کی عبادت کی بات کرے۔ چناں چہ اس مسئلے کا حل ڈھونڈنے کے لیے سب سردار سر جوڑ کر بیٹھے اور پھر متفّقہ طور پر ایک نتیجے پر پہنچنے کے بعد اُنہوں نے

حضرت صالح علیہ السّلام کو بلایا اور کہا۔ ’’اے صالح ؑ! اگر تم اللہ کے سچّے پیغمبر ہو، تو ہم کو کوئی ایسا معجزہ دِکھاؤ، جسے دیکھ کر ہمیں تم پر یقین آ جائے۔‘‘ حضرت صالح علیہ السّلام نے فرمایا ’’اے میری قوم کے لوگو! تم کیا معجزہ دیکھنا چاہتے ہو؟‘‘ اُنہوں نے کہا کہ’’ہم چاہتے ہیں کہ یہ جو سامنے چٹان ہے، اس میں سے ایک ایسی اونٹنی برآمد کرو، جو گابھن ہو، بچّہ دے، ہم سب کے لیے دودھ مہیا کرے اور اس میں فلاں فلاں خُوبیاں ہوں۔ ‘‘حضرت صالح علیہ السّلام نے اُن سے فرمایا’’ اگر مَیں تمہاری شرط پوری کر دوں، تو کیا تم اللہ پر ایمان لے آئو گے؟‘‘ اُنہوں نے جواب دیا ’’ہاں، ہم تمہارے ربّ پر ایمان لے آئیں گے۔‘‘ حضرت صالح علیہ السّلام نے اللہ تعالیٰ کے حضور گڑگڑا کر دُعا فرمائی اور اپنی قوم کی فرمائش پوری کرنے کی التجا کی۔ اللہ تعالیٰ نے اپنے نبی کی دُعا قبول فرمائی اور دیکھتے ہی دیکھتے چٹان شق ہو گئی اور اُس میں سے ایک طویل القامت، خُوب صورت اونٹنی برآمد ہوئی، جس میں وہ سب خوبیاں تھیں، جن کی قومِ ثمود نے فرمائش کی تھی۔ یہ محیّرالعقول منظر دیکھ کر قومِ ثمود لاجواب ہو گئی۔ اس موقعے پر قوم کے سرداروں میں سے ایک، جندع بن عمرو بن محلات بن لبید اپنے چند ساتھیوں کے ساتھ ایمان لے آیا، لیکن اکثریت اپنی ہٹ دھرمی پر قائم رہی اور اسے جادو کا کمال ظاہر کرتی رہی۔ اس موقعے پر حضرت صالح ؑنے اپنی قوم سے فرمایا ’’اے میری قوم! یہ ناقۃ اللہ (یعنی اللہ کی بھیجی ہوئی اونٹنی) ہے، جو تمہارے لیے ایک معجزہ ہے۔ اب تم اسے اللہ کی زمین میں کھاتی ہوئی چھوڑ دو اور اسے کسی طرح کی تکلیف نہ دینا، ورنہ اللہ کا عذاب تمہیں فوری پکڑ لے گا۔‘‘ (سورۂ ہود64:)۔ اونٹنی اور اس کا بچّہ سارا دن نخلستان میں چَرتے رہتے تھے، سب قبیلے والے پیٹ بھر کر اونٹنی کا دودھ پیتے، لیکن وہ کم نہ ہوتا۔حضرت صالح ؑنے کنویں کے پانی کو بھی تقسیم کر دیا تھا۔ ایک دن اونٹنی پانی پیتی تھی اور ایک دن ثمود کے لوگ۔ جب اونٹنی پانی پینے آتی، تو وہ کنویں کا سارا پانی پی جاتی۔قرآنِ کریم میں اللہ تعالیٰ فرماتا ہے کہ ’’صالح ؑنے اپنی قوم سے کہا (دیکھو) یہ اونٹنی ہے (ایک دن) اس کی پانی پینے کی باری ہے اور ایک معیّن روز تمہاری باری۔ اور اس کو کوئی تکلیف نہ دینا، (نہیں تو) تم کو سخت عذاب آ پکڑے گا۔‘‘ (سورۂ الشعراء156:،155) کچھ ہی عرصے بعد قومِ ثمود کو

اونٹنی کی موجودگی کھٹکنے لگی۔ اُنہیں اپنے ہرے بھرے نخلستانوں میں آزادی سے گھومتی پِھرتی اونٹنی ایک آنکھ نہ بھاتی تھی اور جب وہ یہ دیکھتے کہ اپنی باری آنے پر اونٹنی ایک ہی سانس میں پورے کنویں کا پانی پی جاتی ہے، تو حیران ہو کر اسے جادو سے تشبیہ دیتے۔ آخرکار شیطان کے اکسانے پر اُنہوں نے اونٹنی سے جان چھڑوانے کی تدابیر سوچنی شروع کر دیں اور اس کا ایک ہی حل تھا کہ اُسے ہلاک کر دیا جائے، مگر کیسے؟ قومِ ثمود کے سردار یہ کام خود اپنے ہاتھوں انجام دینے کو تیار نہ تھے۔سو، اُنہوں نے دو نہایت اونچے اور مال دار خاندان کی آزاد منش عورتوں کو راضی کیا کہ وہ قوم کے کسی نوجوان سے یہ کام کروائیں،جس پراُن عورتوں نے دو اوباش اور شراب و شباب کے رسیا نوجوانوں کو اونٹنی کے قتل پر آمادہ کیا، جن کے ساتھ مزید سات اوباش نوجوان شامل ہوگئے۔ قرآنِ پاک کی سورۂ نمل میں اللہ تعالیٰ نے حضرت صالح ؑ کا واقعہ بیان کرتے ہوئے فرمایا’’شہر میں نو افراد کی ایک جماعت تھی، جو مُلک میں فساد مچاتے پِھرتے تھے اور اصلاح نہیں کرتے تھے۔‘‘ (سورۂ نمل48:)۔اور پھر حسبِ پروگرام ایک دن یہ 9 افراد اونٹنی کے انتظار میں کنویں کے پاس گھات لگا کر بیٹھ گئے، جب کہ قوم کے لوگ اللہ کے عذاب کے ڈر سے چُھپ کر یہ منظر دیکھنے لگے۔ جب اونٹنی کنویں کے قریب آئی، تو مصدع نامی شخص نے تیر چلایا، جو اُس کی پنڈلی میں پیوست ہو گیا اور ٹانگ سے خون کا فوّارہ جاری ہو گیا۔ اونٹنی کو زخمی دیکھ کر باقی لوگ خوف زَدہ ہو کر پیچھے ہٹ گئے۔ یہ منظر دیکھ کر دونوں عورتیں آگے بڑھیں اور مَردوں کو بُرا بھلا کہنا شروع کردیا، جس پر قبیلے کا سب سے قوی شخص، قدار بن سالف آگے بڑھا اور تلوار کے ایک بھرپور وار سے اونٹنی کی کونچیں (یعنی پچھلے پائوں کے اوپر کا حصّہ) کاٹ ڈالیں۔ اونٹنی شدید زخمی ہو کر زمین پر گر پڑی اور ایک زوردار چیخ ماری۔ اسی اثناء میں زخمی اونٹنی کو گھیرے میں لے کر اُس پر نیزوں اور تلواروں کے لاتعداد وار کیے گئے، جس سے وہ ہلاک ہو گئی۔ اُدھر اس کا بچّہ بھاگتا ہوا پہاڑ پر چڑھا اور چیخیں مارتا غائب ہو گیا۔ ایک روایت یہ بھی ہے کہ اُن درندوں نے پیچھا کر کے اُسے بھی مار ڈالا۔ (واللہ اعلم)

Leave a Comment