نبی پاک ﷺ نے ارشاد فرمایا: سات ہلاک کرنے والے گُناہوں سے بچو

نبی پاک ﷺ نے ارشاد فرمایا: سات ہلاک کرنے والے گُناہوں سے بچو

بی کیونیو! نبی پاک ﷺ نے ارشاد فرمایا: سات ہلاک کرنے والے گُناہوں سے بچو۔ صحابہ کرام علیہم الرضوان نے بارگاہِ رسالت میں عرض کیا: یارسول اللہ! وہ کون سے ہیں؟نبی پاک ﷺ نے ارشاد فرمایا: اللہ تعالی کے ساتھ شرک کرنا، جادو کرنا، جس جان کو اللہ تعالی نے حرام فرمایا ہے اُسے ناحق قتل کرنا، سود کھانا، یتیم کا مال کھانا اور جنگ کے دن میدان چھوڑ کر بھاگ جانا، پاکدامن سیدھی سادھی عورتوں پر زنا کی تہمت لگانا۔ نبی کریمﷺ نے ارشاد فرمایا: اللہ تعالیٰ نے سود کھانے والے سود کھلانے والے اور

اُس کا کاغذ لکھنے والے پر لعنت فرمائی ہے۔ اور ایک روایت میں یہ الفاظ زائد ہیں: اور سود کے گواہوں اور سود کا کاغذ لکھنے والے پر لعنت فرمائی ہے۔ نبی پاک ﷺ نے ارشاد فرمایا: سود کھانے والا سود کھلانے والا سود کا کاغذ لکھنے والااِس بات کو جان لیں کہ قیامت تک محمد (ﷺ) کی زبانِ (مبارک) پر انہیں ملعون کہا گیا ہے۔ حضرت عبداللہ ابن مسعود رضی اللہ تعالیٰ عنہ سے روایت کرتے ہیں کہ رسول ﷺ نے فرمایا: سود سے(بظاہر) اگرچہ مال زیادہ ہو مگر نتیجہ یہ ہے کہ مال کم ہوگا۔ حضرت ابوہریرہ رضی اللہ تعالیٰ عنہ روایت کرتے ہیں کہ رسول اللہ ﷺ نے فرمایا: شبِ معراج میں گزر ایک ایسی قوم پر ہوا جس کے پیٹ گھر کی طرح(بڑے بڑے) ہیں اُن پیٹوں میں سانپ ہیں جو باہر سے دکھائی دیتے ہیں۔ میں نے پوچھا: اے جبریل! یہ کون لوگ ہیں؟ انہوں نے کہا: یہ سود خور ہیں. اللہ تعالی کا فرمانِ عبرت نشان ہے: (یٰٓاَیُّہَا الَّذِیْنَ اٰمَنُوْا اتَّقُوا اللّٰہَ وَ ذَرُوْا مَا بَقِیَ مِنَ الرِّبٰٓوا اِنْ کُنْتُمْ مُّؤْمِنِیْنَ فَاِنْ لَّمْ تَفْعَلُوْا فَاْذَنُوْا بِحَرْبٍ مِّنَ اللّٰہِ وَرَسُوْلِہٖ) ترجمہ کنزالایمان: اے ایمان والو! اللہ سے ڈرو اور چھوڑ دو جو باقی رہ گیا ہے سود اگر مسلمان ہو۔ پھر اگر ایسا نہ کرو تو یقین کرلو اللہ اور اللہ کے رسول سے لڑائی کا۔ اور دوسرے مقام پر فرماتا ہے:(اَلَّذِیْنَ یَاْکُلُوْنَ الرِّبٰوا لَا یَقُوْمُوْنَ اِلاَّ کَمَا یَقُوْمُ الَّذِیْ یَتَخَبَّطُہُ الشَّیْطٰنُ مِنَ الْمَسِّ ذٰلِکَ بِاَنَّہُمْ قَالُوْآ اِنَّمَا الْبَیْعُ مِثْلُ الرِّبٰوا وَ اَحَلَّ اللّٰہُ الْبَیْعَ وَحَرَّمَ الرِّبٰوا فَمَنْ جَآءَ ہٗ مَوْعِظَۃٌ مِّنْ رَّبِّہٖ فَانْتَہٰی فَلَہٗ مَا سَلَفَ وَ اَمْرُہٗ ٓ اِلَی اللّٰہِ وَ مَنْ عَادَ فَاُولٰئِکَ اَصْحٰبُ النَّارِ ہُمْ فِیْہَا خٰلِدُوْنَ) ترجمہ کنزالایمان: وہ جو سود کھاتے ہیں قیامت کے دن نہ کھڑے ہوں گے مگر جیسے کھڑا ہوتا ہے وہ جسے آسیب نے چھو کرمخبوط بنادیا ہو۔ یہ اس لیے کہ انہوں نے کہا: بیع بھی تو سود ہی کے مانند ہے۔ اور اللہ نے حلال کیا بیع کو اور حرام کیاسود تو جسے اُس کے رب کے پاس سے نصیحت آئی اور وہ باز رہا تو اُسے حلال ہے جو پہلے لے چکا اور اُس کا کام خدا کے سپرد ہے۔ اور اب جو ایسی حرکت کرے گاتو وہ دوزخی ہے وہ اس میں مُدّتوں رہیں گے.

Leave a Comment